Race with Sunset

O Fazla (Fazal Muhammad), O! Murtoo (Ghulam Mutraza), O! Khaloo (Khalid), O! Pharoo (Farman), Where are you, guys? Come to the bank of the river and look at the sun while diving in the water. One of our crime partners shouts continuously.

My hut-house was situated at the bank of the pond, It was an amazing sunset scene, feels like the sun is being drowning in the lake. All the kids get together alongside my house for the next step.

It’s time to be quick and get ready for Sun Race. We have to reach a particular place before diving into the sun in the river (Sunset). Quite often our target was lakeside, sometimes we run on the off-road of the village. Occasionally it ended at the bungalow of Haji Sahab (an old and noble man). Sometimes winds up in the shop built with mud walls, from where I mostly enjoyed the Pease and Banana Biscuits of One and Two Rupees.

We change our goal from time to time, but the lakeside was our favourite place to race. I can’t describe the sunset scene of my village situated near the bank of the Lake.

We have raced many times with sunset, but I do not remember that we ever lost, the sun was always runner-up. Even though our target was very long, we complete it happily at lightning speed.

On the 12th of December 2016 the Eye-catching, sunset scene came in front of my eyes from Constitutional Avenue, Islamabad, it took me back to my golden memories of sunset racing.

It is s fact that childhood memories retain back your heart’s whims to act like that, no matter how old you are? So, I decided on the target after focusing on the sunset. So the race began between the two of us, but surprisingly the sun left me too back from the target even though I ran very fast, but this time sun won, and I was runner-up.

See also  What is the distance between heaven and hell Story

I felt too much happy because I was in the middle of my childhood memories, meanwhile too much sad, as It was not the sunset that left me far behind in the race, it was me who lost myself. For the reason that I became too much elder.

My running speed of childhood and the relationship with humanity becomes too much darker alongside Sunset. In the infancy era, the sun was afraid of our independency, our power of growth, and unity.

And, now, after lasting from young pride and power, we have no courage to comprise ourselves with the speed of sun and time. There was one special noting point from that moment, when I lost from the sun, that in the infancy period, we were together, I have sure that sun was thinking about our Solidarity.

But now at that moment sun saw me, he thought “We both are alone, diving, hiding, but I am stronger and I have to rise and shine again. He is stepping towards falling and failing. So, I have many chances to win the battle.” Undoubtedly, when we become together, we will be powerful on earth.

Even time will salute our dignity, loyalty, and solidarity. When times prove your togetherness then the world has now any other option except to think that “What they have done with time, how they are managing the time by making him Slave”.

او فضلا (فضل محمد) اڑے او مُرتُو مَنڈا – (مرتضی ٹانگ ٹوٹے ہوئے) اور خالوُ- (خالد) – او هوڑا – (علی محمد) – اڑے او فلاں ٹِیرا جلدی سب جهیل کنارے آئو اور دیکھو سورج غروب ہو رہا ہے.

See also  What is the distance between heaven and hell Story

ہم میں سے کوئی ایک بچہ چِلاچلا کر سب کو اکٹھا کرتا۔ اور سب بچے مرغیوں کی طرح اڑتے میرے گھر کے پاس آکر جمع ہوتے.

میرے گھر کے پاس سے غروب آفتاب کےوقت کا منظر کچھ یوں محسوس ہوتا جیسے سورج پانی میں ڈوب رہا ہے.

اب جلدی سے بھاگو سورج کا پانی میں ڈوبنے سے پہلے ہم نے فلاں جگہ پر پہنچنا ہے۔ پھر ہم سب مل کر ایک ساتھ نعرہ لگاتے ، آئو دیکھتے نا تائو ، سمندر دیکھتے نا ئو اور خوشی سےعربی گھوڑے کی رفتار سے بھاگنا شروع کرتے.

ہمارا ہدف اکثر و بیشتر جھیل کا کنارہ ہوتا تو کبھی کبھار گائوں کی کچی سڑک اور ہماری دُڑگیاں، کبھی ہماری دوڑ کا درجہ حاجی صاحب کے بنگلے تک تو کبھی وہ کچی دیواروں سے بنی ہٹڑی ، جہاں سے میں ایک یا دو روپے کے چنے یا بنانا بسکٹ والی عیاشیاں کرتا تھا، وقتاً فوقتاً اپنے ہدف کو تبدیل بھی کرتے رہتے تھے پر جو مزہ جھیل کنارے کا تھا وہ کہیں پر نہیں ہوتا تھا اس کو الفاظ میں بیان بھی کروں پر وہ منظرآنا بہت مشکل ہے۔ ہم نے غروب آفتاب کے ساتھ ان گنت دوڑیں لگائی پر ہمیں یاد نہیں کہ سورج ایک بار بھی جیت پایا ہو ۔ ہمارا ہدف طویل سے طویل تر بھی ہوتا ہم وہ برق رفتا ری سے فتح کر لیتے تھے

12 دسمبر 2016 کو شاہراہ دستور اسلام آباد سے غروب آفتاب کا حسین منظر دیکھا تو ستائیس میں وہ سہانے دن یاد آگئے۔ پھر بچپنا جب یاد آئے تو وہ حرکتیں کرنے کا بھی جوش لازمی ابھرتا ہے۔ میں نے بھی وہی کیا اور غروب آفتاب کو مدنظر رکھ کر اپنا ہدف مقرر کیا.

ہم دونوں میں دوڑ کا مقابلہ شروع ہوا، پر سورج نے مجھے قریب ہی نہیں آنے دیا۔ بہت زور لگایا اور دوڑ لگائی پر سورج جیت گیا اور میں ہار گیا.

See also  What is the distance between heaven and hell Story

خوشی ہوئی کے میں نے اپنے بچپنے کے دنوں کو دہرایا افسوس اس بات کا ہوا کہ سورج مجھ سے نہیں جیتا میں خود سے خود کو ہار بیٹھا تھا، کیوں کہ میں اب بڑا ہوگیا تھا ، میری بچپن کی برق رفتاری اور وہ انسانیت والا اپنا پن بڑا ہوتے ہی سورج غروب ہونے کے بعد تاریک ہو چکا تھا.

بچپن کے دور میں سورج کو بھی ڈر لگتا ہوگا کے یہ سب دوست تو دنیا سے بے نیاز ہوکر پرواں چڑہ رہے ہیں میں ان سے کیا مقابلہ کر سکتا ہوں۔ اب ہمارے بچپن کا گھمنڈ اور غرور ٹوٹ چکا تھا .اب ہم وقت کی روانی اور سورج کی رفتار سے مقابلہ کرنے کی ہمت کھو چکے ہیں کیوں کہ ہم بہت بڑے ہو چکے ہیں.

ایک اور بات یہ بھی تھی جس کی وجہ سے میں اجگری آفتاب سے ہارا وہ یہ کہ بچپن کے دنوں میں ہم سب ایک تھے جس کی وجہ سے سورج بھی سوچنے پر مجبور ہوتا کہ یہ سب تو ایک ہیں اور میں اکیلاان سے جیتنا مشکل ہے ۔ پر اب کے بار مجھے اکیلا دیکھا تو سورج نے بھی سینا تان لیا اور سوچا ہوگا کہ اب یہ بھی اکیلا ہے اور میں بھی اکیلا۔ یہ بھی غروب کی طرف رواں دواں ہے اور میں بھی اپنی منزل کے قریب ہوں۔ تیزی سے گذر جائونگا.

جب ہم ایک ہونگے تو وقت بھی ہمارے آگے ہار ماننے پر مجبور ہوجائےگا جب وقت آپکی سلامی دے تو دنیا والوں کی سوچ بھی دنگ رہ جاتی ہے کہ انہوں وقت کو کیسے اپنا غلام بنایا ہوا ہے